(Zarb-e-Kaleem-031) (غزل) Ghazal

غزل

دل مردہ دل نہیں ہے،اسے زندہ کر دوبارہ
کہ یہی ہے امتوں کے مرض کہن کا چارہ
مرض کہن کا چارہ: پرانی کا بیماری کا علاج۔
ترا بحر پر سکوں ہے، یہ سکوں ہے یا فسوں ہے؟
نہ نہنگ ہے، نہ طوفاں، نہ خرابی کنارہ!
نہنگ: مگر مچھ، مراد ہے خطرات۔
تو ضمیر آسماں سے ابھی آشنا نہیں ہے
نہیں بے قرار کرتا تجھے غمزہ ستارہ

ترے نیستاں میں ڈالا مرے نغمہ سحر نے
مری خاک پے سپر میں جو نہاں تھا اک شرارہ
پے سپر: افسردہ، بجھی ہوئی۔
نظر آئے گا اسی کو یہ جہان دوش و فردا
جسے آگئی میسر مری شوخی نظارہ

English Translation:

غزل
دل مردہ دل نہیں ہے،اسے زندہ کر دوبارہ کہ یہی ہے امتوں کے مرض کہن کا چارہ مرض کہن کا چارہ: پرانی کا بیماری کا علاج۔ A heart devoid of love is dead; infuse fresh life in it again. It is the only cure for folk who suffer from some chronic pain. ترا بحر پر سکوں ہے، یہ سکوں ہے یا فسوں ہے؟ نہ نہنگ ہے، نہ طوفاں، نہ خرابی کنارہ! نہنگ: مگر مچھ، مراد ہے خطرات۔ Your sea is full of calm and rest, is it repose or magic art? No sharks and storms disturb your sea, intact its coast in every part. تو ضمیر آسماں سے ابھی آشنا نہیں ہے نہیں بے قرار کرتا تجھے غمزہ ستارہ You are not intimate with laws that rule the spheres that spin around; the twinkling stars do not disturb the calm which in your heart is found. ترے نیستاں میں ڈالا مرے نغمہ سحر نے مری خاک پے سپر میں جو نہاں تھا اک شرارہ پے سپر: افسردہ، بجھی ہوئی۔ The dormant spark that buried lay in my extinguished clay since long has set afire your bed of reeds, assuming form of morning song. نظر آئے گا اسی کو یہ جہان دوش و فردا جسے آگئی میسر مری شوخی نظارہ That man can only see in full the world of future and the past, who has the luck to be endowed with my glance so pert and fast. (Translated by Syed Akbar Ali Shah)

Comments are closed.

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: