(Bang-e-Dra-192) (یہ آیہ نو، جیل سے نازل ہوئی مجھ پر) Ye Aaya’ay Nau, Jail Se Nazil Huwi Mujh Par

یہ آیہ نو، جیل سے نازل ہوئی مجھ پر یہ آیہ نو، جیل سے نازل ہوئی مجھ پر گیتا میں ہے قرآن تو قرآن میں گیتا کیا خوب ہوئی آشتی شیخ و برہمن اس جنگ میں آخر نہ یہ ہارا نہ وہ جیتا مندر سے تو بیزار تھا پہلے ہی سے 'بدری' مسجد سے نکلتا... Continue Reading →

(Bang-e-Dra-191) (رات مچھر نے کہہ دیا مجھ سے) Raat Machar Ne Keh Diya Mujh Se

رات مچھر نے کہہ دیا مجھ سے رات مچھر نے کہہ دیا مجھ سے ماجرا اپنی ناتمامی کا مجھ کو دیتے ہیں ایک بوند لہو صلہ شب بھر کی تشنہ کامی کا اور یہ بسوہ دار، بے زحمت پی گیا سب لہو اسامی کا اسامي: کاشتکار۔ بسوہ دار: مراد ہے زمیندار ۔

(Bang-e-Dra-190) (گاۓ اک روز ہوئی اونٹ سے یوں گرم سخن) Gaye Ek Roz Huwi Unth Se Yun Garam-e-Sukhan

گائے اک روز ہوئی اونٹ سے یوں گرم سخن گائے اک روز ہوئی اونٹ سے یوں گرم سخن نہیں اک حال پہ دنیا میں کسی شے کو قرار میں تو بد نام ہوئی توڑ کے رسی اپنی سنتی ہوں آپ نے بھی توڑکے رکھ دی ہے مہار ہند میں آپ تو از روئے سیاست ہیں... Continue Reading →

(Bang-e-Dra-188) (فرما رہے تھے شیخ طریق عمل پہ واعظ) Farma Rahe Thay Sheikh Tareek-e-Amal Pe Wa’az

فرما رہے تھے شیخ طریق عمل پہ وعظ فرما رہے تھے شیخ طریق عمل پہ وعظ کفار ہند کے ہیں تجارت میں سخت کوش مشرک ہیں وہ جو رکھتے ہیں مشرک سے لین دین لیکن ہماری قوم ہے محروم عقل و ہوش ناپاک چیز ہوتی ہے کافر کے ہاتھ کی سن لے، اگر ہے گوش... Continue Reading →

(Bang-e-Dra-187) (دلیل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کیا ہو گی) Daleel-e-Meher-o-Wafa Iss Se Barh Ke Kya Ho Gi

دلیل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کیا ہوگی دلیل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کیا ہوگی نہ ہو حضور سے الفت تو یہ ستم نہ سہیں مصر ہے حلقہ،کمیٹی میں کچھ کہیں ہم بھی مگر رضائے کلکٹر کو بھانپ لیں تو کہیں مصر: بضد، اسرار کرنے والا۔ سند تو لیجیے، لڑکوں... Continue Reading →

(Bang-e-Dra-186) (ممبری امپیریل کونسل کی کچھ مشکل نہیں) Memberi Imperial Council Ki Kuch Mushkil Nahin

ممبری امپیریل کونسل کی کچھ مشکل نہیں ممبری امپیریل کونسل کی کچھ مشکل نہیں ووٹ تو مل جائیں گے، پیسے بھی دلوائیں گے کیا؟ میرزا غالب خدا بخشے، بجا فرما گئے "ہم نے یہ ماناکہ دلی میں رہیں، کھائیں گے کیا؟"

(Bang-e-Dra-183) (وہ مس بولی ارادہ خود کشی کا جب کیا میں نے) Wo Miss Boli Irada Khudkushi Ka Jab Kiya Mein Ne

وہ مس بولی ارادہ خودکشی کا جب کیا میں نے وہ مس بولی ارادہ خودکشی کا جب کیا میں نے مہذب ہے تو اے عاشق! قدم باہر نہ دھر حد سے نہ جرات ہے، نہ خنجر ہے تو قصد خودکشی کیسا یہ مانا درد ناکامی گیا تیرا گزر حد سے کہا میں نے کہ اے... Continue Reading →

Blog at WordPress.com.

Up ↑