(Bal-e-Jibril-106) (کبھی تنہائی کوہ و دمن عشق) Kabhi Tanhai-e-Koh-o-Daman Ishq

کبھی تنہائی کوہ و دمن عشق کبھی تنہائی کوہ و دمن عشق کبھی سوز و سرور و انجمن عشق کبھی سرمایہ محراب و منبر کبھی مولا علی خیبر شکن عشق! از- علامہ محمد اقبال ؒ (کبھی پہاڑ کی تنہائی اور وادی میں عشق) (کبھی غم و خوشی اور مجلس میں عشق) (کبھی مومن کا قیمتی... Continue Reading →

(Asrar-e-Khudi-07) (در بیان اینکہ خودی) Dar Biyan Aynke Khudi

دل ز عشق او توانا می شود
خاک ھمدوش ثریا می شود
آپ (صلعم) کے عشق سے دل قوّت پاتا ہے اور خاکی انسان کا رتبہ ثریا جتنا بلند ہو جاتا ہے۔
By love of Him the heart is made strong and earth rubs shoulders with the Pleiades.
خاک نجد از فیض او چالاک شد
آمد اندر وجد و بر افلاک شد
اور نجد کی خاک نے آپ (صلعم) کے فیض سے بلند رتبہ پایا اور افلاک تک پہنچ گئی۔
The soil of Najd was quickened by his grace and fell into a rapture and rose to the skies.
در دل مسلم مقام مصطفی است
آبروی ما ز نام مصطفی است
حضور (صلعم) کا مقام مسلمان کے دل میں ہے؛ حضور (صلعم) ہی کے نام سے ہماری آبرو ہے۔
In the Muslim's heart is the home of Muhammad. All our glory is from the name of Muhammad.
طور موجے از غبار خانہ اش
کعبہ را بیت الحرم کاشانہ اش
طور آپ (صلعم) کے گھر کے غبار کی ایک موج ہے؛ آپ (صلعم) کا حجرہ مبارک کعبہ کے لیے بیت الحرم (حرمت والا گھر) ہے۔
Sinai is but an eddy of the dust of his house; his dwelling-place is a sanctuary to the Ka'aba itself.

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑